chancellor

تمام تعریفیں اللہ کی ہیں اوردرود اس کے نبی ﷺ کی ذات پر جن کے طفیل ہمیں جناح یونیورسٹی برائے خواتین کے ذریعے خدمت کا موقع ملا۔ یہ یونیورسٹی ایک خواب کی تعبیر ہے۔وہ خواب جو میرے والد محترم الحاق مولوی ریاض الدین احمد نے دیکھا تھا،انہوں نے ہی خواتین کی تعلیم کے لیے اس ادارے کا بیج بویا تھا جو اب ایک ثمر آور شجر بن چکا ہے۔میں نے بڑے عاجزانہ طور پر اعلیٰ تعلیم کے فروغ کا چیلنج قبول کیا ہے اور یقین دلاتا ہوں کہ میں اپنے بابصیرت والد کے نقش قد م پر چلتا رہوں گا۔یونیورسٹی حقیقی معنوں میں ان خواتین کی نمائندہ ہے جو اس مادر علمی سے تعلیم حاصل کرنے کے بعد مختلف شعبہ ہائے زندگی میں نام کمارہی ہیں۔

انجمن اسلامیہ ٹرسٹ کی بنیاد الحا ج مولوی ریاض الدین احمد نے رکھی تھی۔ یہ ادار ہ لڑکیوں کو معیاری تعلیم کی فراہمی کیلیے کوشاں ہے۔والد محترم نے اپنی ساری زندگی مسلمانان ہند کی تعلیم اور اس تعلیم کے ذریعے ان کی زندگیوں میں بہتری لانے کے لیے وقف کر دی۔ان کے قائم کر دہ ٹرسٹ کے زیر اہتمام 17اسکول اور کالج بنے لیکن جناح یونیورسٹی برائے خواتین کا قیام پاکستان میں خواتین کی تعلیم کی تاریخ میں ایک سنگ میل کی حیثیت رکھتا ہے۔

یونیورسٹی مختلف مضامین میں اعلیٰ معیار کی تعلیم دے رہی ہے۔ اس کی چار فیکلٹیز فارمیسی، سائنس، آرٹس اور بزنس ایڈمنسٹریشن اینڈ کامرس ہیں۔ ان فیکلٹیز میں پی ایچ ڈی، ایم فل اور ماسٹر ڈگری کے حامل 215اعلیٰ تعلیم یافتہ اساتذہ تدریسی خدمات انجام دے رہے ہیں۔

مزید برآں یونیورسٹی طالبات کو ایم اے، ایم ایس، ایم فل اور پی ایچ ڈی میں داخلے بھی دیتی ہے۔یونیورسٹی ان طالبات کی تعلیمی ضروریات پورا کررہی ہے جنہیں مالی دشواریوں کا سامنا ہے اور یہی وجہ ہے کہ ہم نے فیسوں کا ڈھانچہ کم از کم قابل برداشت حدتک رکھا ہے۔

یونیورسٹی میں اچھی طرح کے سازو سامان سے لیس لیبارٹریاں موجود ہیں بالخصوص سائنس فیکلٹی کے تمام شعبوں اور فارمیسی کے تمام شعبوں کے لیے اچھی طرح آراستہ لیبارٹریاں موجود ہیں۔مرکزی لائبریری اور ڈیجیٹل لائبریری کے ذریعے ہزاروں ای بکس اور جرنلز طالبات کی رسائی میں ہیں۔اس کے علاوہ انٹرنیٹ اور وائی فائی کی سہولت اب یونیورسٹی کے تمام بلاکس میں موجود تمام شعبوں کو حاصل ہے۔

یہ بتانا موزوں ہو گا کہ علمی سرگرمیوں کے فروغ میں فیکلٹیز کا کردار قابل ستائش ہے اور میں اس سلسلے میں اساتذہ کی کوششوں پر ان کا ممنون و شکرگزار ہوں۔

میں نئے داخل ہونے والے طلبہ کا خیر مقدم کر تا ہوں اور قادر مطلق اللہ تعالیٰ سے دعاگو ہوں کہ وہ انہیں مستقبل میں کامیابیوں سے مالامال کرے، والدین سے بھی گزارش ہے کہ کہ وہ بچیوں کی تعلیم پر توجہ دے کر ملک و قوم کو طاقتور بنانے کا فریضہ انجام دیں۔

وجیہہ الدین

چانسلر